پاکستان

نوازشریف کی گرفتاری پر احتجاج کرنے والے لوگ کون تھے اور کس کے کہنے پر آئے تھے ؟ لرزہ خیز انکشاف

ملتان : سابق وزیراعظم کو گذشتہ روز احتساب عدالت نے سزا سنائی جس کے بعد انہیں گرفتار کر لیا گیا۔ مسلم لیگ ن کے قائد نواز شریف کو سزا اور ان کی گرفتاری پر مسلم لیگ ن کے کارکنان نے خوب احتجاج کیا۔ تاہم اب احتجاج میں خواتین کو پیسوں کے عوض لائے جانے کا انکشاف ہوا ہے۔ میڈیا رپورٹ کے مطابق ملتان میں مسلم لیگ ن کے ویمن ونگ کی خواتین کو پیسوں کےعوض احتجاج میں لایا گیا۔

احتجاج میں شریک خواتین کو ایک ایک ہزار روہے کے عوض احتجاج میں لایا گیا لیکن ن لیگیوں نے احتجاج ختم ہونے کے بعد خواتین کو جھنڈی کروا دی اور پورے پیسے ادا نہیں کیے۔ ایک خاتون نے ایک ہزار کی بجائے صرف 3 سو روپے ملنے کا شکوہ کیا۔ سوشل میڈیا پر یہ خبر وائرل ہونے پر مسلم لیگ ن کو سخت تنقید کا نشانہ بنایا گیا اور کہا گیا کہ اب مسلم لیگ ن پر یہ وقت آ گیا ہے کہ انہیں پارٹی قائد کی گرفتاری پر احتجاج کرنے کے لیے پیسوں کے عوض لوگ بلانے کی نوبت آ گئی ہے۔

واضح رہے کہ آج صبح بھی جب سابق وزیراعظم نواز شریف اور ملسم لیگ ن کے قائد نواز شریف کو کوٹ لکھپت جیل منتقل کیا گیا تو جیل کے باہر ن لیگی کارکنان کی انتہائی مایوس کُن تعداد تھی ۔ اس موقع پر کسی بڑے سیاسی رہنما کو بھی نہیں دیکھا گیا۔ یاد رہے کہ گذشتہ روزاحتساب عدالت نے سابق وزیر اعظم نواز شریف کو فلیگ شپ ریفرنس میں بری کر دیا جبکہ العزیزیہ ریفرنس میں مجرم قرار دیتے ہوئے سات سال قید بامشقت کی سزا سنائی ۔

نواز شریف پر 1.5 ملین پاؤنڈز اور 25 ملین ڈالرز کا الگ الگ جُرمانہ بھی عائد کیا گیا جبکہ نواز شریف کو دس سال تک عوامی عہدہ رکھنے کے لیے بھی نا اہل قرار دے دیا گیا۔ عدالت نے نواز شریف کی جائیداد ضبطگی کا بھی حکم دیا۔ جس کے بعد نیب نے نواز شریف کو کمرہ عدالت سے گرفتار کر لیا تھا۔

Show More

متعلقہ خبریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close
Close