پاکستان

جیل جاتے ہی نواز شریف کو ضمانت کی خوشخبری مل گئی، اب تک کی سب سے بڑی خبر آگئی

لاہور :احتساب عدالت نے سابق وزیر اعظم نواز شریف کو فلیگ شپ ریفرنس میں بری کر دیا جبکہ العزیزیہ ریفرنس میں مجرم قرار دیتے ہوئے سات سال قید بامشقت کی سزا سنائی ۔ نواز شریف پر 1.5 ملین پاؤنڈز اور 25 ملین ڈالرز کا الگ الگ جُرمانہ بھی عائد کیا گیا جبکہ نواز شریف کو دس سال تک عوامی عہدہ رکھنے کے لیے بھی نا اہل قرار دے دیا گیا۔

عدالت نے نواز شریف کی جائیداد ضبطگی کا بھی حکم دیا۔ جس کے بعد نیب نے نواز شریف کو کمرہ عدالت سے گرفتار کر لیا۔ سابق وزیراعظم میاں نواز شریف کو سپریم کورٹ میں جس کمپنی سے بطور ملازم تنخواہ لینے پر نااہل قرار دیا گیا اس سے متعلقہ فلیگ شپ ریفرنس میں احتساب عدالت نے انہیں بری کر دیا ۔ اس حوالے سے بات کرتے ہوئے سینئر قانون دان چوہدری قیصر امام نے کہا کہ العزیزیہ سٹیل مل ریفرنس میں سزا کے بعد میاں نواز شریف کو بآسانی ضمانت مل جائےگی ۔

انہوں نے کہا کہ اگر کسی ملزم کی سزا دس سال سے کم ہو تو ایسے کیسز میں آسانی سے ضمانت مل جاتی ہے ۔ قانون دان کا کہنا تھا کہ العزیزیہ اور فلیگ شپ ریفرنسز میں سے ایک ریفرنس میں نوازشریف بری ہو چکے ہیں اسی طرح سے العزیزیہ ریفرنس میں انہیں دس سال سزا ہوئی ہے جس سے بظاہر یہ بات معلوم ہوتی ہے کہ یہ جرم ایون فیلڈ کے مقابلے میں کم ہے کیونکہ ایون فیلڈ ریفرنس میں گیارہ سال سزا ہوئی تھی۔

تیسری وجہ یہ ہے کہ چونکہ تینوں ریفرنسز میں شواہد ایک جیسے تھے اور ان کی بنیاد پانامہ جے آئی ٹی کی رپورٹ تھی۔ نیب پراسیکیوشن بھی اس رپورٹ سے باہر نہیں نکل سکی، جب تینوں ریفرنسز کا گراﺅنڈ ایک ہے، اور ایک میں سزا کے بعد ضمانت مل چکی ہے دوسرے میں بری ہوگئے ہیں تو تیسرے ریفرنس میں بھی ان کو سزا کے بعد بآسانی ضمانت مل جائے گی۔

Show More

متعلقہ خبریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close
Close