وڈیوزکالم

بھارت کا خوفناک چہرہ بھارت کے اپنے ہی وزیراعظم نے واضح کردیا

وہ کہاوت تو آپ سب نے سنی ہوگی کہ دیر آئے مگر درست آئے آج وہی حال ایشیا کے سب سے بڑے ملک بھارت کے ساتھ ہوا، جو ایک لمبے عرصے سے مقبوضہ کشمیر پر قبضا کرنے کے لیے معصوم اور بے بس لوگوں کو اپنی طاقت کا نشانہ بنارہا ہے ، اور اقلیتوں کے ساتھ بھی بھارت کا سلوک کچھ اچھا نہیں رہا لیکن بھارت ہر موقع پر انتہائی سفاک جھوٹ بولتا آیا ہے، گزشتہ روز بھارت کے سابق وزیراعظم منوہن سنگ نے نا صرف ان تمام باتوں کا اعتراف کیا بلکہ پاکستان سے ایک بڑا مطالبہ بھی کردیا آئیے جانتے ہیں انھوں نے کیا کہا-

بھارت کے سابق وزیراعظم منوہن سنگ نے اپنے حالیہ بیان میں کڑوا سچ بولا جس سے بھارت کے تن بدن میں آگ لگ گئی، انھوں نے اپنے بیان میں کہا کہ بھارت میں لوگوں کوزبردستی ہندوہونے پرمجبورکیاجارہاہے پاکستان کشمیریوں کے ساتھ سکھوں کی آزادی کی بھی بات کرے-

انھوں نے ساتھ ہی ساتھ اس راز سے بھی پردہ اٹھایا کہ بھارتی حکومت نے مقبوضہ کشمیرمیں مظالم کی انتہاکردی گئی ہے۔پاکستان دنیامیں کشمیریوں کیساتھ سکھوں کی آزادی کی بھی بات بلندکرے۔انہوں نے کہا کہ بھارت میں اقلیتوں سے مذہبی آزادی کوچھیناجارہاہے۔

بھارت جو ہمیشہ سے عالمی دنیا کے سامنے خود کو شرافت کا پتلا ثابت کرتا رہا ہے اور پاکستان سمیت ایشیا بھر کے ممالک میں اپنا سکا جمانے کے لیے سر توڑ کوششیں کرتا آیا ہے اور اُس کی ایک واضح مثال ہے کہ بھارتی خفیہ ایجنسی را اور بھارت آرمی کے حاضر ملازم گلبوشن یادیو کو پاکستان کے سب سے بڑے صوبے بلوچستان میں تخریب کاری کرتے ہوئے پاکستان آرمی نے رنگے ہاتھوں پکڑ لیا اور پکڑے جانے کے بعد گلبوشن یادیو نے اس بات کا اقرار بھی کیا کہ وہ بھارتی خفیہ ایجنسی را کے ساتھ کام کرتا ہے اور بھارت پاکستان میں دہشتگردی کروانے اور بلوچستان پر قبضے کرنے کے لیے پاکستان میں ماجود دہشت گرد عناصر کو فنڈنگ کرتا ہے-

جب تمام ثبوت منظر عام پر لائے گئے تو بھارت نے گلبوشن یادیو کو اپنا شہری ماننے سے ہی انکار کردیا اور ہرطرح کے ہیلے بہانوں سے گلبوشن یادیو کو رہا کروانے کی کوشش کی گئی لیکن جب بھارت کو لگا کہ اب پانی سر سے گزر چکا ہے تو بھارت عالمی عدالت میں مدد مانگنے کو بھاگا-

بھارت کچھ ایسا ہی کشمیروں کے ساتھ بھی کرتا آیا ہے ، طاقت کے نشے میں چور بھارت کئی سالوں سے کشمیر پر قیضہ کرنے کی کوشش کرتا آرہا ہے لیکن ہمیشہ ناکام رہا ہے، بھارت نے کشمیریوں پر قیامت کُن مظالم ڈھاٹے لیکن پھر بھی کشمیریوں کی تحریک آزادی کو نہیں روک پایا-

آج سے دوسال پہلے جب بھارت کے آرمی چیف نے عہدہ سنبھالا تو اُنھوں نے ایک جارہانہ بیان دیا کہ ” میں دوسال میں ہی کشمیریوں کی تحریک آزادی ختم کردوں گا اور کشمیر میں سکون لے آئوں گا” لیکن جب وہ ناکام ہوگئے تو انھوں نے اعتراف کرلیا کہ بھارت کشمیر پر طاقت کے ذریعے قبضہ نہیں کرسکتا ہم ایک کشمیری کو مارتے ہیں پیچھے سے ہزاروں نکل آتے ہیں-

اور تعجب کی بات یہ کہ 10 لاکھ کے قریب بھارتی فوجی اہلکار بھی ایک چھوٹے سے کشمیر کو کنڑول کرنے میں ناکام رہے ہیں اور کشمیر میں ظلم کی انتہاکردی پھر بھی ناکامی ملی-

علاوہ ازیں سکھ مذہب جنہوں نے آزادی کے وقت بھارت کے ساتھ الحاق کیا تھا وہ بھی بھارت کے مظالم اور نا انصافیوں سے تنگ آچکے ہیں, اور بھارت میں سکھوں نے بھی آزادی کی ایک پرزور تحریک خالصتان نے زور پکڑ لیا ہے اور اس دفعہ تو بھارتی وزیراعظم منوہن سنگ بھی اس تحریک میں شامل ہوگئے ہیں اور تحریک کو ایک نئی روہ پھونک دی ہے-

اور یہاں سب سے حیران کُن بات یہ کہ سکھ بھی پاکستان کے ساتھ الحاق کرنا چاہتے ہیں، منموہن سنگ نے اپنی تقریر میں اس بات سے بھی پردہ اٹھا دیا کہ بھارت میں اقلیتوں کے ساتھ کیا سلوک کیا جاتا ہے اور انہیں کیسے زبردستی ہندوں مزہب میں لایا جاتا ہے-

یہ تھی بھارت کی ماجودہ صورتحال جس سے بھارت ہمیشہ انکار کرتا آیا ہے-

Tags
Show More

متعلقہ خبریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

یہ بھی دیکھیں

Close
Close
Close