پاکستان

خیبر پختون خواہ میں تعلیمی نظام کس حد تک گرچکا ہے ؟ چیف جسٹس کا حیران کُن انکشاف

اسلام آباد: خیبر پختون خواہ میں تعلیم کا سب سے برا حال ہے ‘‘ سپریم کورٹ نے ایبٹ آباد کے دو مشہور میڈیکل کالجوں میں داخلے پر پابندی لگا دی

سپریم کورٹ کے جسٹس سعید نے کہاہے کہ خیبرپختونخوا میں میڈیکل تعلیم کاحال سب سے براہے، آج کے بعدایبٹ آبادکے نجی میڈیکل کالجز میں کوئی داخلہ نہیں ہوگا، ان سے آبادی ویسے توکنٹرول ہوتی نہیں،بندے مارنے کیلئے اس طرح کے ڈاکٹرزبنائے جاتے ہیں۔

اسلام آباد ہائی کورٹ نے ایبٹ آباد کے دونجی کالجز کو مطلوبہ معیار پر پورا نا اترنے کی وجہ داخلے پر پابندی عائد کر دی ہے ۔

دوران سماعت جسٹس عظمت سعیدنے ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ پاکستانی میڈیکل کالجز کی ڈگریوں کی اہمیت بیرون ملک کاغذکے ٹکڑے سے زیادہ نہیں،ان سے آبادی ویسے توکنٹرول ہوتی نہیں،بندے مارنے کیلئے اس طرح کے ڈاکٹرزبنائے جاتے ہیں۔

واضح رہے کہ پی ایم ڈی ایس نے مطلوبہ معیار پر پورا نا اترنے کی وجہ سے دومیڈیکل کالجز میں داخلوں پرپابندی عائد کی تھی جس پر پی ایم ڈی سی کے وکیل بیرسٹر سیف نے عدالت میں بتایا کہ پابندی مطلوبہ معیار پر پورا نہ اترنے کی وجہ سے لگائی گئی تھی ۔جس پر میڈیکل کالجز کے وکیل نے دلائل دیتے ہوئے کہا کہ نجی میڈیکل کالجز نے پی ایم ڈی سی کے احکامات کوپشاور ہائیکورٹ میں چیلنج کیاتھا،پشاورہائیکورٹ نے داخلوں سے پابندی اٹھانے کاحکم جاری کیا تھا۔

جسٹس عظمت سعید نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ خیبرپختونخوا میں میڈیکل تعلیم کاحال سب سے براہے،جسٹس سجاد علی شاہ نے کہا کہ میڈیکل کالج کے پاس 250 بیڈزکاہسپتال ہوناچاہیے جو ا ن کے پاس نہیں۔ جسٹس عظمت سعید نے ریمارکس دیئے کہ آج کے بعدایبٹ آبادکے نجی میڈیکل کالجز میں کوئی داخلہ نہیں ہوگا۔ وکیل میڈیکل کالج کا کہناتھا کہ پشاور ہائیکورٹ میں دخواست زیر التوا ہے ۔ سپریم کورٹ نے کہا کہ درخواست کا فیصلہ آنے کے بعد کیس کی سماعت کی جائے گی ۔

Show More

متعلقہ خبریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close
Close