پاکستان

100 پاکستانی اور بھارتی مرد ایک معصوم بچی کے ساتھ کیا کرتے رہے ؟ استغفراللہ

لندن : برطانیہ میں کچھ عرصہ پہلے یہ انکشاف ہوا تھا کہ برظانیہ کے شہر رودرہیم میں پاکستانی اور انڈین مرد لڑکیوں کو اغوا کرکے انکوں زیادتی کا نشانہ بناتے ہیں-

میل آن لائن کی رپورٹ کے مطابق برطانیہ میں ایک گروہ سرگرم تھا جو سینکڑوں لڑکیوں کو اپنی ہوس کا نشانہ بناچکا ہے اور اس میں سے زیادہ تر لڑکیوں کی عمر 16 سے 18 سال کے درمیان ہے-

اور سب سے افسوس ناک بات یہ کہ مثاثرہ لڑکیوں میں سے ایک لڑکی کو پاکستانی اور بھارتی مردوں نے 100 دفعہ اپنی جنسی ہراسانی کا نشانہ بنایا- متاثرہ لڑکی کو آج عدالت میں پیش کیا گیا تو اُس کا کہنا تھا کہ وہ 13سال کی تھی جب گینگ کے ایک رکن نے اس کے ساتھ دوستی کی۔ پھر وہ اسے ایک گھر میں لے گیا جہاں گینگ کے دیگر اراکین بھی موجود تھے۔ انہوں نے لڑکی کو پہلے زبردستی منشیات دیں اور پھر اسے اجتماعی زیادتی کا نشانہ بنا ڈالا۔ اس کے بعد انہوں نے اسے جسم فروشی کے دھندے پر لگا دیا اور اسے مختلف جگہوں پر پاکستانی اور بھارتی مردوں کے ہاتھ فروخت کرنے لگے۔

لڑکی کا کہنا تھا کہ گینگ کے ہاتھوں یرغمالی کے تین سالوں میں اسے 100سے زائد پاکستانی اور بھارتی مردوں نے جنسی زیادتی کا نشانہ بنایا۔تمام متاثرہ لڑکیوں کا بیان ریکارڈ کرنے کے بعد عدالت نے مرکزی ملزمان کو 101 سال کی سزا سنادی-

سماعت کے دوران پراسیکیوٹر مشعیل کولبرن نے عدالت میں بتایا کہ ”اس گینگ کا شکار بننے والی تمام لڑکیاں مقامی تھیں اور آسان ٹارگٹ تھیں۔ ان میں سے اکثر بے گھر تھیں یا پھر گھر میں انہیں ماں باپ کی طرف سے وہ توجہ نہیں مل رہی تھی جس کے باعث وہ اس گینگ کے ہتھے چڑھ گئیں۔“ ان میں آصف علی کو 10سال، تنویر علی کو 14سال، اقبال یوسف کو 20سال اور صلاح احمد الحاکم کو 15سال قید کی سزا سنائی گئی۔

Show More

متعلقہ خبریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close
Close