پاکستان

لاہور میں لاوارث لاشوں کے ساتھ کیا کیا جاتا ہے ؟ ایسا انکشاف کہ سن کر رونگٹے کھڑے ہوجائیں

لاہور : پنجاب کے دارالحکومت لاہور میں لاوارث لاشوں کو بیچنے اور دریا میں پھینکنے کا حیران کُن انکشاف ہواہے-

پاکستان کے ایک بڑے شہر میں نامعلوم لاشیں ملنے کے واقعات میں روزبروز اضافہ ہورہا ہے اور اس سال صرف 10 ماہ کے دوران 700 سے زائد لاشیں مل چکی ہیں ، یعنی ہر روز 2 لاشیں مل رہی ہیں اور لاشوں کی اس بڑھتی ہوئی تعداد نے ہسپتال انتظامیہ کے ساتھ ساتھ تحقیقاتی اداروں کو بھی پریشانی میں ڈال دیا ہے-

رواں سال پراسرار طور پر وفات پانے والے 700 افراد میں سے 458 لاشوں کی شناخت نا ہو سکی ، اور ایک حیران کُن انکشاف سامنے آیا ہے جس کے مطابق لاوارث لاشوں کو تجربات کے لیے پرائیوٹ کالجز کو سستے داموں بیچ دیا جاتا ہے اور وہ ان پر تجربات کرکے ابہیں دریا میں بہادیتے ہیں-

ذرائع کے مطابق جب پولیس کو کسی نامعلوم لاش کی اطلاع دی جاتی ہے تو وہ لاش کو اٹھا کر مردہ خانے میں پھینکوادیتے ہیں اور اُس کے بعد اسپتال انتظامیہ سے اس بارے میں رابطہ ہی نہیں کیا جاتا اور لاش کے گلنے سڑنے پر انہیں دریا میں پھنکوادیا جاتا ہے-

لاہور میں کچھ ایسے واقعات بھی دیکھے گئے ہیں کہ پولیس لاش کے نام پر چندہ اکٹھا کرتی ہیں اور بعد میں انہیں بیچ دیتی یا پھر قانونی کاروائی اور غسل کرنے کے بغیر ہی مٹی کھود کے دفنا دیا جاتا ہے-حالانکہ گورنمنٹ آف پاکستان نے ایسی تمام لاشوں کے لیے قبرستان میں جگہ مختص کر رکھی ہے-

Show More

متعلقہ خبریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close
Close