پاکستان

چیف جسٹس نے تمام پبلک مقامات سے بل بورڈزاکھاڑ بھینکنے کا حکم دے دیا

اسلام آباد: سپریم کورٹ نے ایک اور بڑے کیس کا فیصلہ سناتے تمام سول، کنٹونمنٹ علاقوں سے بل بورڈز، ہورڈنگز اکھاڑ پھینکنے کا حکم دے دیا-

چیف جسٹس میاں ثاقب نثار نے لاہور میں لگے ل بورڈز کے معاملے کی دبنگ سماعت کی۔

سماعت کے آغاز ہی میں انھوں نے کہا کہ ریلوے، پارکس اینڈ ہورٹی کلچر اتھارٹی (پی ایچ اے)، کنٹونمنٹ بورڈ اور ڈیفنس ہاؤسنگ اتھارٹی (ڈی ایچ اے) کی حدود میں بل بورڈز لگے ہیں، بتائیں کس انتظامی حصے میں بل بورڈز کا مسئلہ ہے؟

انھوں نے مزید ریمارکس دے کہ پبلک پراپرٹی پر بل بورڈز نہیں لگائے جاسکتے، اگر کسی نے لگانے ہیں تو ذاتی پراپرٹی پر لگائے، کراچی والے آرڈر کے مطابق پبلک پراپرٹی پر بل بورڈز نہیں لگ سکتے’۔

چیف جسٹس نے کہا کہ ‘کراچی میں آرڈر کیا تھا کہ سڑکوں سے بل بورڈ ہٹائے جائیں، وہاں کیا گیا آرڈر یہاں بھی لاگو ہوگا’۔

انھوں نے مزید کہا کہ ‘فٹ پاتھ عوام کے چلنے کے لیے ہیں، ان پر بل بورڈز کے لیے بڑے بڑے کھمبے لگا دیئے گئے، روڈز پر کیسے بل بورڈز کی اجازت دے سکتے ہیں؟’

اس موقع پر جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیئے کہ ‘یہ عوام کی جان کے لیے بھی خطرہ ہے’۔

 

Show More

متعلقہ خبریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close
Close